جب مہاجر ایک تھا ہیلو کی آواز آیا کرتی تھی 51 ایم پی اے 21 ایم این اے 8 سینیٹر میئر کراچی حیدرآباد 14 سالوں کا گورنر سندھ موجود تھا اس وقت کیا کراچی اور حیدرآباد میں دودھ کی نہریں بہہ رہی تھی اپنے حافظے کا علاج کراؤ مہاجروں! کیا یہ پریشانیاں نہیں تھی اس وقت؟

جب مہاجر ایک تھا ہیلو کی آواز آیا کرتی تھی 51 ایم پی اے 21 ایم این اے 8 سینیٹر میئر کراچی حیدرآباد 14 سالوں کا گورنر سندھ موجود تھا اس وقت کیا کراچی اور حیدرآباد میں دودھ کی نہریں بہہ رہی تھی اپنے حافظے کا علاج کراؤ مہاجروں! کیا یہ پریشانیاں نہیں تھی اس وقت؟

عقیل احمد راجپوت

Read More

زندہ ہے مہاجر زندہ ہے _ جواب

کمال کی وجہ سے زندہ ہیں
شہدا قبرستان نا جا کر زندہ ہیں
بلوچوں سے مل کر زندہ ہیں
سندھی سے مل کر زندہ ہیں
پنجابی سے مل کر زندہ ہیں
دوستی کر کر زندہ ہیں
کٹی پہاڑی والے بھی زندہ ہیں
قصبہ والے بھی زندہ ہیں
لیاری والے بھی زندہ ہیں
رنچوھوڑلائن والے بھی زندہ ہیں
قاسم آباد والے بھی زندہ ہیں
لطیف آباد والے بھی زندہ ہیں
کچرے میں رہ کر زندہ ہیں
گٹر والا پانی پی کر بھی زندہ ہیں
کیا بھول گئے تم مہاجر ٹوٹی سڑکیں مہاجر
تمہیں یاد دلاوُں گٹروں کا ابلنا مہاجر
لائٹ کا جانا مہاجر پانی نا آنا مہاجر
عباسی کی حالت مہاجراورنگی کی حالت مہاجر
کورنگی کی حالت مہاجر ملیر گلیاں مہاجر
قبرستان پر طالے مہاجر بچوں کا ملنا مہاجر
ماوُں کا ہسنا مہاجر بہنوں کا کھلنا مہاجر
بچوں کی خوشیاں مہاجر باپوں کے چہرے مہاجر
کیا بھول گئے تم مہاجر تمہیں یاد دلاوُں
صولت سے مُکرنا مہاجر
اجمل سے مُکرنا مہاجر شری سے مُکرنا مہاجر
پھر وقاص کا مرنا مہاجر پھر کانفرنس نا کرنا مہاجر
ایک لندن والا ایک لانڈھی والا
پھر مہاجروں کی لاشیں ان پہ سیاست
پھر اس کو بلانا گلے لگانا شہدا والوں سے اسے معاف کرانا
لندن سے اپنی نسل مٹوانا پھر مٹانے والوں کو اپنا بنوانا
پھر اس کے دھوکے چھاپے پڑوانا
پارٹی پر قبضہ فاروق کو لانا
فاروق ہٹا کر خالد کو لانا
ایم کیو ایم کو پھر حقیقی بنانا
اور کیا کیا بتاوُں تم سن نہیں سکتے
بس اتنا بتاوُں ایک سید ہے آیا
جس نے تم کوآزاد کرایا
مہاجر ہوں میں بھی فخر ہے مجھ کو
اس وطن کو کیسے لٹنے میں دے دوں
میرے اپنوں نے ہے یہ ملک بنایا
سوچوں تم بھی کیا تم نے کھویا کیا تم نے پایا
✍🏻
عقیل احمد راجپوت

Read More

سانحہ پکا قلعہ 26 مئی

مہاجر قوم نے ایک پارٹی کو ہر لحاظ سے سپورٹ کر کے اس کے وفاقی وزیر، صوبائی وزیر اور وزیر داخلہ بنائے مگر وہ ان پولیس والوں کو کیفرِ کردار تک نا پہنچا سکے قوم نے ووٹ اور عزت دے کر 14 سال کے لئے گورنر بنایا مگر وہ بھی اس عمل کو بے نقاب کرنے سے قاصر رہا اور مہاجروں کی سپورٹ پر گورنر کا منصب سنبھال کر 14 سال پاکستان کی تاریخ کی سب لمبی گورنری سے ہٹنے کے اگلے ہی دن مہاجروں کو گٹر ملا پانی اور کچرے کے ڈھیر میں چھوڑ کر دبئی کی پر فضا ماحول میں قائدانہ صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے اگلی فلائٹ سے روانہ ہوگیا اور آئے دن مہاجروں کو چڑانے کے لئے روز آنے اور ان پر حکومت کرنے کے شوشے چھوڑتا رہتا ہے اور اس گروپ میں موجود لوگ ایک نئی ایم کیو ایم کے قیام کی خبریں دیتے ہوئے خوشی کے ترانے بجاتے ہوئے نظر آتے ہیں
شکریہ مصطفیٰ کمال مجھے اپنی قوم سے منافقت کرنے کے دلدل سے نکالنے پر شکریہ میرے شہر میں روز مرنے والی میری قوم کے نوجوانوں کو شہداء قبرستان میں دفنانے سے بچانے پر شکریہ میری قوم کے بیروزگار کو پورے کراچی میں حصول رزق کے لئے نوگو ایریاز ختم کرانے اور حلال رزق کمانے کا راستہ ہموار کروانے کے لئے شکریہ منافقین کے چہروں پر چڑھے معصومیت کے نقاب نوچ ڈالنے کا شکریہ
شکریہ سالوں سے بچھڑے جوانوں کو ان کے والدین سے ملانے کا
شکریہ معصوم بچوں کی دروازے پر لگی اپنے والد کے چہرے کو دیکھنے کی آرزوں پوری کرنے کا
شکریہ دربدر بھٹکنے والے میری قوم کے نوجوانوں کو سہی راہ پر گامزن کرنے کا
اور سب سے بڑھ کر شکریہ مسلمانوں سے لسانیت کے نام پر جاری دہائیوں کی دشمنی کو ختم کرکے کے بھائی کو بھائیوں کے گلے ملوانے کا
شکریہ مصطفیٰ کمال
✍️

32سالوں میں ہر قسم کی حمایت کے باوجود آج تم لوگ گٹر کا پانی پینے پر مجبور ہو گیارہ بار الیکشن جتوانے کی پہلی شرط کوٹہ سسٹم کا خاتمہ تھا مہاجر پورے پاکستان کی سب سے زیادہ پڑھی لکھی قوموں میں شمار ہوا کرتی تھی آج مہاجر پورے پاکستان میں ٹارگٹ کلرز کی نظروں سے دیکھا جاتا ہے مصطفیٰ کمال نے مجھے عزت اور احترام واپس دیا میں اپنے اللّٰہ کے سامنے سرخرو ہو گیا میں مہاجر منجن والوں کا اعلیٰ کار نہیں، مجھے مہاجر ہونے پر فخر ہے لیکن لسانی سیاست کرنے سے اگر فوائد ہوتے تو آج مہاجروں کا یہ حال نہیں ہوتا ہم پاکستانی شہری کی حیثیت سے اپنے حقوق کی جدو جہد کریں گے اور اپنے حقوق آئین کے مطابق حاصل کرنے کی کوشش میں آپ کو اپنی جدوجہد میں شامل ہونے کی آواز لگاتے رہیں گے میری آواز آپ کے دلوں میں اتارنا میرے رب کی مرضی ہے کیونکہ جب مسجد سے اذان کی آواز لگتی ہیں تو جسے رب العالمین توفیق دیتا ہے وہی نمازوں میں شامل ہوتے ہیں اسی طرح آواز ہم دیتے رہیں گے آپ کا ہمارے ساتھ شامل ہونا میرے رب کی مرضی پر منحصر ہے شکریہ
پاکستان ذندہ باد
تحریر عقیل احمد راجپوت
غلطی کے لئے پیشگی معزرت خواہ ہوں

Read More

مورخہ 5 جون 2021 پاک سر زمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفیٰ کمال کی اہلیان آئی بلاک نارتھ ناظم آباد کی دعوت پر خدیجہ مارکیٹ بلاک آئی آمد

پاک سر زمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفیٰ کمال کی اہلیان آئی بلاک نارتھ ناظم آباد کی دعوت پر خدیجہ مارکیٹ بلاک آئی آمد ۔علاقہ معزیزین اور ہمدردوں سے خطاب۔اس موقع پر پارٹی صدر انیس احمد قائم خانی،وائس چئیر مین ڈاکٹر ارشد وہرا،ممبر نیشنل کونسل ڈاکٹر سراج،عبداللہ شیخ ،ڈسٹرک و ٹاؤن کے ذمیداران بھی موجود

Read More

ماحولیات کے عالمی دن پر چئیرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفیٰ کمال کا بیان

ماحولیاتی تغیرات کے سبب سب سے زیادہ خطرات میں گھرے 8 ممالک میں شامل پاکستان کے نااہل و کرپٹ وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے غلط فیصلوں کے باعث باغات کا شہر لاہور درختوں سے خالی ہو کر ’سموگ ٹریپ‘ کراچی ’ہیٹ ٹریپ‘ اور اسلام آباد ’پلوشن ٹریپ‘ میں تبدیل کردیا ہے۔

بلین ٹری سونامی جیسا اہم منصوبہ بھی کرپشن کی نظر کردیا گیا۔

نیب کے مطابق بلین ٹری سونامی پروجیکٹ میں اربوں روپے کی خرد برد کی گئی۔

سندھ کی تعصب زدہ حکومت نے پہلے سندھ کو ریگستان بنایا اور اب کراچی کو صحرا میں تبدیل کررہی ہے۔

کراچی میں آخری بار درخت اور باغات میرے دور نظامت میں لگائے گئے۔

ہمارے جانے کے بعد ٹمبر مافیا، بل بورڈ مافیا، نالائق اور کرپٹ صوبائی اور بلدیاتی حکومت کے گٹھ جوڑ نے اربوں روپے کمانے کے لیے منفی پروپیگنڈا کرکہ عوامی مفاد میں لگائے گئے ہزاروں درختوں کو کاٹ کر اپنی جیبیں گرم کیں۔

ماحولیاتی تبدیلی سے سب سے زیادہ متاثر غریب طبقہ ہے جس کے لیے ماحولیاتی تبدیلی بقاء کا مسئلہ ہے۔

ماحولیاتی تبدیلیوں کے خلاف سب سے موثر جنگ موثر بلدیاتی حکومتوں کے ذریعے لڑی جا سکتی ہے،

اختیارات اور وسائل پر قابض حکمرانوں کو اختیارات اور وسائل کو نچلی ترین سطح پر منتقل کرکہ ملک کو درپیش چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے تیار ہونا ہوگا۔

ہنگامی بنیادوں پر وسیع پیمانے پر شجر کاری، ساحلی پٹی کو محفوظ کرنے کے لیے مینگروز کا یقینی تحفظ، جنگلات کے کاٹنے پر مکمل پابندی عائد ہونی چاہیے،

مرکزی شعبہ نشر و اشاعت
پاک سرزمین پارٹی

Read More
TV cameras lined up, covering large public event

درخواست برائے اہم اسائنمنٹ—لائیو/میڈیا کوریج—اہم پریس کانفرنس

جناب محترم/ محترمہ

ڈائریکٹر نیوز، بیورو چیف، اسائنمنٹ ایڈیٹر، چیف ایڈیٹر، چیف ایڈیٹر نیوز، ایڈیٹر، رپورٹرز، کیمرہ مین، فوٹوگرافرز

السلام علیکم

چئیر مین پاک سر زمین پارٹی سید مصطفیٰ کمال، کل مورخہ 5 جون بروز ہفتہ، اہم پریس کانفرنس سے خطاب کریں گے

مورخہ: 5 جون 2021
بوقت: صبح 11:30 بجے
بمقام: پاکستان ہاؤس، PECHS Block 6، رازی روڈ، شاہراہِ فیصل، کراچی

تمام صحافی خواتین و حضرات اور چینلز سے درخواست ہے کہ براہ کرم میڈیا کوریج کے لیے آپ اور لائیو کوریج کے لئے اپنی ڈی ایس این جی بتائے گئے وقت اور مقام پر بھیج دیں۔

آپ کے تعاون کے طلبگار۔

مرکزی شعبہ نشر و اشاعت
پاک سرزمین پارٹی
http://www.psp.org.pk

Read More

(پریس ریلیز)پاک سر زمین پارٹی کے مرکزی وائس چیئرمین اور سابق ڈپٹی میئر ارشد وہرہ نے لیاقت آباد نمبر 9 میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا

مورخہ،31مئی 2021

(پریس ریلیز)پاک سر زمین پارٹی کے مرکزی وائس چیئرمین اور سابق ڈپٹی میئر ارشد وہرہ نے لیاقت آباد نمبر 9 میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ
لیاقت آباد کی ایک مارکیٹ پورے لاہور سے زیادہ ٹیکس ادا کرتی ہے، اسکے باوجود لیاقت آباد بدحال اور کھنڈرات کا منظر پیش کررہا ہے۔ لیاقت آباد یونین کونسل 34 کی آبادی ایک لاکھ سے زائد ہے، اس گنجان ترین آبادی میں ہر گلی 8 فٹ کچرے سے ڈھکی ہوئی ہے، کسی بھی وقت کوئی بڑا سانحہ پیش آسکتا ہے جبکہ سالڈ ویسٹ منیجمنٹ لاپتہ ہے، لیاقت آباد میں بوسیدہ گیس لائنیں شہریوں کے لئے عزاب بن چکی ہیں، بوسیدہ گیس لائنوں سے گیس کے اخراج سے 26 مئی کو 4 بچے اپنی جانوں سے گئے، اس وقت لیاقت آباد نمبر 9 میں گیس لائنیں کچرے کے ڈھیر تلے دبی ہوئی ہیں جن میں سانپ تک موجود ہیں۔ سالڈ ویسٹ مینجمنٹ سے اربوں روہے کا حساب لیا جائے ، وزیراعظم عمران خان بلین ٹری سونامی کی بات کرتے ہیں اور بل گیٹس کو خط لکھ رہے ہیں۔ بل گیٹس گرین سے پہلے کلین کا لفظ استعمال کرتا ہے،عمران خان بل گیٹس سے گرین پاکستان کے حوالے سے بات کرتے ہیں مگر کلین پاکستان پر توجہ نہیں دیتے، لیاقت آباد پاکستان کی سیاست کا اکھاڑہ ہے، لیاقت آباد کا کچرا اٹھانے کے لئے پی ڈی ایم اے کو ٹاسک دیا جائے۔اس شہر سے پی ٹی آئی کے 14 ایم این اے 25 ایم پی اے ہیں،اربابِ اختیار اب تک اس علاقے میں نہیں آئے، کتنے مزید سانحات کا انتظار کر رہے ہیں،عوام کو خود اپنے حقوق کے لیے کھڑا ہونا ہوگا، جب تک کھڑے نہیں ہونگے ظلم بڑھتا رہے گا۔ سندھ حکومت نے لیاقت آباد کو بے آسرا رکھا ہوا ہے تب بھی یہاں سے سب سے زیادہ ٹیکس جمع کیا جاتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے لیاقت آباد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کیا۔ ارشد وہرہ کے ہمراہ پی ایس پی کے وائس چئیرمین سید حفیظ الدین پارٹی، سینئیر جوائنٹ سیکریٹری بلقیس مختار، ڈپٹی سیکرٹری اطلاعات شمشاد صدیقی، رکن نیشنل کونسل و ڈسٹرکٹ سینٹرل کے انچارج اور شہید ہونے والے بچوں کے والد بھی بھی موجود تھے۔ ارشد وہرہ نے مزید کہا کہ گجر نالے کی صفائی کے لئے این ڈی ایم اے کو جس طرح بلایا گیا لیاقت آباد کے لئے پی ڈی ایم اے کو بلایا جائے، اب تک ڈپٹی کمشنر یا کمشنر کراچی انسانی جانوں کے ضائع ہونے کے بعد یہاں نہیں آئے۔جس طرح بارشوں کے بعد این ڈی ایم اے کو بلایا گیا اسی طرح ان گلیوں سے ہنگامی بنیادوں پر کچرا اٹھانے کیلئے دوبارہ بلایا جائے۔ سندھ حکومت کمشنر کراچی، ڈپٹی کمشنر اور ایڈمنسٹریٹر کو یہاں آنے کا پابند بنائے اس علاقے کی صفائی یقینی بنائی جائے، کچرے کے ڈھیروں میں سانپ تک پائے جاتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ بلدیاتی ادارے کہاں ہیں کسی کو کچھ معلوم نہیں ،شہر میں صرف اس جگہ کام ہو رہا ہے جہاں کمیشن زیادہ ملتا ہے۔ اس علاقے کی عوام کو تمام بنیادی سہولیات فراہم کی جائیں۔ اس موقع پر پی ایس پی کے وائس چیئرمین ارشد وہرا دیگر مرکزی زمہ داران نے شہید ہونے والے افراد کے اہل خانہ سے ملاقات کی اور شہداء کے درجات کی بلندی، لواحقین کے لیے صبر جمیل کی دعا کی اور حکومت سے شہداء کے لواحقین کے لیے مالی معاوضے اور زخمیوں کیلئے بہترین طبی امداد کا مطالبہ کی۔ا اس موقع پر رقت انگیز مناظر دیکھنے میں آئے، ہر شخص کی آنکھیں نم تھیں

Read More